Suna hai log usay ankh bhar ka dekhta hai Urdu best romantic love Poetry quotes

Suna hai log usay ankh bhar ka dekhta hai

سنا ہے لوگ اسے آنکھ بھر کے دیکھتے ہیں

Urdu best romantic Poetry – Easy to Copy to Clipboard

Urdu

سنا ہے لوگ اسے آنکھ بھر کے دیکھتے ہیں
سو اس کے شہر میں کچھ دن ٹھہر کے دیکھتے ہیں

سنا ہے ربط ہے اس کو خراب حالوں سے
سو اپنے آپ کو برباد کر کے دیکھتے ہیں

سنا ہے درد کی گاہک ہے چشم ناز اس کی
سو ہم بھی اس کی گلی سے گزر کے دیکھتے ہیں

سنا ہے اس کو بھی ہے شعر و شاعری سے شغف
سو ہم بھی معجزے اپنے ہنر کے دیکھتے ہیں

سنا ہے بولے تو باتوں سے پھول جھڑتے ہیں
یہ بات ہے تو چلو بات کر کے دیکھتے ہیں

سنا ہے رات اسے چاند تکتا رہتا ہے
ستارے بام فلک سے اتر کے دیکھتے ہیں

سنا ہے دن کو اسے تتلیاں ستاتی ہیں
سنا ہے رات کو جگنو ٹھہر کے دیکھتے ہیں

سنا ہے حشر ہیں اس کی غزال سی آنکھیں
سنا ہے اس کو ہرن دشت بھر کے دیکھتے ہیں

سنا ہے رات سے بڑھ کر ہیں کاکلیں اس کی
سنا ہے شام کو سائے گزر کے دیکھتے ہیں

سنا ہے اس کی سیہ چشمگی قیامت ہے
سو اس کو سرمہ فروش آہ بھر کے دیکھتے ہیں

سنا ہے اس کے لبوں سے گلاب جلتے ہیں
سو ہم بہار پہ الزام دھر کے دیکھتے ہیں

سنا ہے آئنہ تمثال ہے جبیں اس کی
جو سادہ دل ہیں اسے بن سنور کے دیکھتے ہیں

سنا ہے جب سے حمائل ہیں اس کی گردن میں
مزاج اور ہی لعل و گہر کے دیکھتے ہیں

سنا ہے چشم تصور سے دشت امکاں میں
پلنگ زاویے اس کی کمر کے دیکھتے ہیں

سنا ہے اس کے بدن کی تراش ایسی ہے
کہ پھول اپنی قبائیں کتر کے دیکھتے ہیں

وہ سرو قد ہے مگر بے گل مراد نہیں
کہ اس شجر پہ شگوفے ثمر کے دیکھتے ہیں

بس اک نگاہ سے لٹتا ہے قافلہ دل کا
سو رہروان تمنا بھی ڈر کے دیکھتے ہیں

سنا ہے اس کے شبستاں سے متصل ہے بہشت
مکیں ادھر کے بھی جلوے ادھر کے دیکھتے ہیں

رکے تو گردشیں اس کا طواف کرتی ہیں
چلے تو اس کو زمانے ٹھہر کے دیکھتے ہیں

کسے نصیب کہ بے پیرہن اسے دیکھے
کبھی کبھی در و دیوار گھر کے دیکھتے ہیں

کہانیاں ہی سہی سب مبالغے ہی سہی
اگر وہ خواب ہے تعبیر کر کے دیکھتے ہیں

اب اس کے شہر میں ٹھہریں کہ کوچ کر جائیں
فرازؔ آؤ ستارے سفر کے دیکھتے ہیں

Roman Urdu

Suna hai log usay ankh bhar ka dekhta hai
So, iska sehar ma ja kar dahtay hai

Suna hai rabt hai is ko kharab halo sa
So, apna aap ko barbad kar ka dakhtay hai

Suna hai dard ki gahak hai chacham-e-naaz is ki
So, hum be iski gali sa guzar ka dakhtay hai
Suna hsi is ko be sayr-o-shairy sa shoak hai
So, hum be moazay apnay hunar ka dakhtay hai

Suna hai, Bolay to bato sa phool jirtay hai
Ya baat hai to chlo baat kar ka dakhtay hai

Suna hai raaa isay chandni takta rahta hai
Sitaray bam falak sa utar ka dakhtay hai

Suna hai din ko usay titliya satati hai
Suna hai raat ko jughnu tahar ka dakhtay hai

Suna hai hashar hain is ki ghazal si ankahin
Suna hai is ko hiran dashat bhar ka dakhtgay hai

Suna hai raat sa bhar kar hai kaklain us ki
Suan hai sham ko syia guzar ka dakhtay hai

Suna hai is ki siyah chashmigi kaiyamat hai
So, is ko saryam farosh AAH bahr ka dakhtay hai

Suna hai is ka labo sa gulab ghaltay hai
So, hum bahar pap ilzam dahar ka dakhtay hai

Suna hai ayina tamasal hai jebin is ki
Jo sada dil hai isa ban ka sawar ka dakhtay hai

Suna hai jab sa hamail hain is ki gardan mai
Mazag or be laal hai-o-gahar ka dakhtay hai

Suna hai chacham-e-tasweer sa dashat imkah mai
Palang zawiya is kamar ka dakhtay hai

Suna hai is ka badan ki tarash asi hai
Ka phool apni kabain kutar ka dakhtay hai

Woh sir-o-kad ba-magar ba-gull murad nahi
Ka is saghar pa sagufay samar ka dakhtay hai

Bas is nigha sa lat-ta be qafla dill ka
So, rehroan tamana be dar ka dakhtay hai

Suna hai is ka shabastan sa mutshil hai beshat
Makin idhar ka be jalway udhar ka be dahtay hai

Raukhain to gardishain is ka tawaf karti hai
Chalay to is ko zamana tahar ka dakhtay hai

Kasay naseeb hai be-peharn isay dakh
Kabhi kabhi dar-o-diwar gahr ka dakhty hai

Kahania be sahi sab mubalghy he sahi
Aghar wo khawab hai taibeer kar ka dakhtay hai

Aab is ka sahar main taharain ka kooch kar jaiyn
Faraz, ayo sataray safar ka dakhtay hai

Leave a Comment